صادق ٹی وی

تحریر: مولانا ابرار عالم (June 17, 2012)

(1) اس ٹی وی کے ذریعہ میں چاہتا ہوں کہ دنیا کے تمام ادیان و مذاہب کے ماہر اور مشہور و معروف مذہبی پیشواؤں کو مدعو کرکے ان سب سے یہ درخواست کروں کہ موجودہ ادیان و مذاہب میں سے بتائیں کہ حقیقت میں سچا اور خالقِ کائنات یعنی اللہ تعالیٰ کا پسندیدہ مذہب کونسا ہے ؟ کیونکہ یہ سب کہتے ہیں کہ صرف اُن کا مذہب ہی سچا ہے اور باقی تمام ادیان و مذاہب نامکمل ،منسوخ یا باطل ہیں مثلاً یہودی پیشوا کہتے ہیں کہ صرف اُن کا مذہب سچا ہے باقی تمام مذاہب جیسے کہ اسلام، عیسائیت ، ہندو مت، بدھ مت ، سکھ ازم ، پارسی ازم وغیرہ باطل ہیں۔ اسی طرح عیسائی پیشوا کہتے ہیں کہ صرف اُن ہی کا مذہب سچا ہے اور باقی تمام ادیان و مذہب باطل ہیں گویا تمام مذاہب کے پیشوایہ کہتے ہیں کہ صرف ایک ہی مذہب سچا ہے ۔ یہ لوگ یہ نہیں کہتے کہ سارے ادیان و مذاہب سچے ہیں کیونکہ یہ لوگ جانتے ہیں کہ ایسا ہونا ناممکن اور محال ہے کہ ایک ہی وقت میں تمام ادیان و مذاہب سچے ہوں اس لئے کہ اُن تمام کے اندر عقائد و اعمال کے اعتبار سے شدید اختلافات اور تضادات ہیں ۔ اس لئے میں چاہتا ہوں کہ یہ سب مذہبی پیشوا متعین کریں کہ آخر وہ صرف ایک سچا مذہب کونساہے تاکہ دنیا کے تمام انسان اُس ایک مذہب کو اختیار کرکے:
(i) دائمی طور پر دنیا سے غربت و افلاس کو ختم کرسکیں
(ii) دائمی طور پر دنیا سے جہالت کو ختم کرسکیں
(iii) دائمی طور پر دنیا سے بدامنی کو ختم کرسکیں
(iv) دائمی طور پر جنگوں کا خاتمہ کرسکیں 
(v) دائمی طور پر ایٹمی جنگوں کو روک سکیں
(vi) اس دنیا کو جنت نما بناسکیں
(vii) انسانوں کے دیگر مسائل کو حل کرسکیں 
(viii) اور مرنے کے بعد والی زندگی میں کامیاب ہو کر جنت میں داخل ہوسکیں کیونکہ اُ س دنیا میں صرف سچے
مذہب کا پیروکار ہی جنت میں داخل ہوگا اور غلط مذہب کا پیروکار ہمیشہ کیلئے جہنم میں داخل ہوگا۔

(2) اس ٹی وی کے ذریعے اللہ تعالیٰ کے ایسے دوستوں اور ولیوں کو جمع کرنا چاہتا ہوں جو کیمیکل استعمال کئے بغیر بھی آگ میں داخل ہوں تو نہ جل سکیں تاکہ ایک بڑی آگ جلا کر دینِ اسلام کی سچائی کو ثابت کرنے کے لئے اُنہیں اس آگ میں داخل ہونے کو کہا جائے ۔ اللہ تعالیٰ کے حکم سے وہ آگ میں نہیں جلیں گے جبکہ غیر مسلموں سے بھی کہا جائے گا کہ اگر وہ لوگ اپنے مذہب کو سچا مانتے ہیں تو آگ میں کیمیکل استعمال کئے بغیر داخل ہوکر دکھائیں یا تو وہ داخل نہیں ہوں گے اور اگر داخل ہوئے بھی تو یقینی طور پر جل جائیں گے جس سے یہ ثابت ہوجائے گا کہ ان کا مذہب نامکمل ، منسوخ یا باطل ہے ۔ اس طرح انشاء اللہ عوام الناس جوق در جوق اسلام میں داخل ہوں گے اور دنیا میں صرف ایک ہی مذہب باقی رہ جائے گا یا دین اسلام غالب ہوجائے گا۔
(3) اس ٹی وی کے ذریعہ میں اپنی ایک حیران کن اور منفرد تحقیق پیش کرنا چاہتا ہوں ۔ وہ تحقیق یہ ہے کہ سب سے پہلے انسان ، تمام انسانوں کے باپ اور اللہ تعالیٰ کے پہلے نبی یعنی حضرت آدم علیہ السلام سے لے کر آخری رسول محمد صلی اللہ علیہ وسلم تک تمام انبیاء کرام علیہم السلام ( جن کی تعداد کم و بیش ایک لاکھ چوبیس ہزار ہے) کی نعشہائے مبارکہ بالکل تازہ حالت میں قبروں میں محفوظ ہیں (سوائے حضرت عیسیٰ علیہ السلام کے کہ اللہ تعالیٰ نے اُن کو آسمان پر زندہ اُٹھالیاتھا ) جیسا کہ جمع الفوائد جلد اوّل حدیث نمبر 1924میں ہے اور ابوداؤد شریف جلد اوّل کتاب الصلوٰۃ باب ابواب تفریع الجمعۃ میں ہے کہ اللہ تعالیٰ نے مٹی پر انبیاء کرام علیہم السلام کے جسموں کے کھانے کو حرام کردیا ہے ۔ 
اسی طرح سورۂ البقرۃ آیت نمبر 154اور سورۂ آل عمران آیت نمبر 169میں ہے کہ وہ لوگ جو اللہ کے راستے میں قتل ہوتے ہیں وہ زندہ ہیں لیکن تم لوگ شعور نہیں رکھتے ۔ ان دونوں آیات کے بارے میں تفسیر البیان القرآن میں حضرت مولانا اشرف علی تھانوی ؒ نے لکھا ہے کہ شہدائے اسلام کے نعشہائے مبارکہ بالکل محفوظ ہیں نیز تحقیقی طور پر بھی ثابت ہوا ہے کہ 2 ھ ؁ سے 1433 ؁ھ تک جتنی بھی اسلام و کفر کی جنگیں ہوئیں اور اُن میں جتنے بھی مسلمان شہید ہوئے اُن سب کی نعشیں بالکل تروتازہ حالت میں کفن سمیت محفوظ ہیں ، ان میں سے بعض کی آنکھوں میں روشنی ، بعض کے جسم میں تازہ خون اور بعض کے جسم سے خوشبو آنا وغیرہ بھی ثابت ہے ۔ 2 ھ ؁ سے 1433 ؁ھ تک دیکھا جائے تو شہدائے اسلام کی تعداد کروڑوں میں ہے جن کی نعشیں محفوظ ہیں ، اب بھی محفوظ رہتی ہیں اور تاقیامت محفو ظ رہتی رہیں گی نیز ان کے علاوہ دیگر سچے مومنین و مومنات کی محفوظ نعشوں کے بھی ثبوت ملے ہیں اور اُن کی تعداد بھی لاکھوں میں ہے ۔ 
جبکہ دوسری جانب حضرت محمد صلی اللہ علیہ وسلم کے زمانہ سے کسی بھی غیر مسلم یعنی یہودی ، عیسائی ، ہندو، بدھشٹ اور پارسی وغیرہ کی لاش ترو تازہ حالت میں بغیر کیمیکل استعمال کئے ہوئے محفوظ نہیں ہے اور نہ ہی محفوظ رہتی ہے اورنہ ہی کبھی محفوظ رہے گی (بشرطیکہ خاتمہ اسلام پر نہ ہوا ہو) کیونکہ سورۂ البقرۃ آیت نمبر 161اور 162میں ہے کہ بیشک وہ لوگ جنہوں نے کفر کیا اور اسی حالت میں اُن کی موت آئی اُن پر اللہ تعالیٰ کی لعنت ، فرشتوں کی لعنت اور تمام انسانوں کی لعنت ہوتی ہے یہ لوگ ہمیشہ جہنم میں رہیں گے، اُن سے عذاب میں کمی نہیں کی جائے گی اور نہ ہی اُن کو مہلت دی جائے گی ۔ ان دونوں آیات سے ثابت ہوا کہ کفر کی حالت میں مرنے والے لوگ مرتے ہی عذاب میں مبتلا ہوجاتے ہیں اور ظاہر سی بات ہے کہ عذاب جسم اور روح دونوں کو ہوتا ہے اسی لئے اُن میں سے کسی کی لاش بھی محفوظ نہیں رہتی کیونکہ وہ عذاب میں ہے ۔ 
اس لئے میں چاہتا ہوں کہ دنیا کے تمام انسانوں تک اس بات کو دنیا کی ہر زبان میں صادق نامی ٹی وی چینل کے ذریعے پہنچایا جائے تاکہ دینِ اسلام کی سچائی اور دوسرے ادیان و مذاہب کا منسوخ و نامکمل ہونا یا باطل ہونا کھل کر سامنے آجائے اور انسان مرنے کے بعد والی زندگی کو کامیاب بنانے کے لئے فکر کریں ۔یہ ٹی وی چینل قیامت تک کام کرتا رہے ۔ نیز اس ٹی وی پر مذکورہ تحقیق پر تبصرہ اورغور و فکر کے لئے دنیا کے تمام مشہور و معروف مسلم و غیر مسلم مذہبی پیشواؤں ، رہنماؤں ، سیاستدانوں ، حکمرانوں ، ججوں ، وکیلوں، مفکروں، دانشوروں ، میڈیکل ڈاکٹروں ، سائنسدانوں اور دوسرے اہم افراد کو مدعو کرکے اُن سے انٹر ویوز کئے جائیں اور جو باتیں اس تحقیق سے ثابت ہوتی ہیں اور یہ لوگ اس تحقیق سے جو کچھ بھی سمجھیں گے ان تمام باتوں کو تمام زبانوں میں دنیا کے تمام انسانوں تک پہنچایا جائے۔ 
اس ٹی وی چینل کے قیام اوراسے چلانے کے لئے کم از کم پاکستانی 25ارب روپے کی فوری ضرورت ہے ۔ لہٰذا دنیا کے تمام مخلص مسلمانوں سے اپیل ہے کہ وہ حسبِ توفیق ہدیہ جمع کرائیں ۔ 
آپ کا ایک اسلامی بھائی
چےئرمین مذہبی اقوام متحدہ کراچی، عالمی امن کے داعی ، روحانی ڈاکٹر ( مولانا) ابرار عالم ، کراچی ۔ پاکستان 
بینک اکاؤنٹ: ابرار عالم اکاؤنٹ نمبر01-1772727-01
صادق اسٹینڈرڈچارٹرڈبینک ، نارتھ کراچی برانچ، کراچی۔ پاکستان
موبائل: 0092-306-2045286 0092-333-2100668

Coronavirus Cure Pakistan